Home / Urdu articles

Urdu articles

Articles in urdu languages.
hinaji.com provides different article styles and different way of topics.
There is latest thinking on life and about the people experiences.
urdu article , latest uk and pakistani article detail in urdu ,
latest online stories , urdu stories , popular urdu article .
pakistan aur dosri dunya k urdu zuban main article.

Air Conditioner 1 Ton in Urdu

Air Conditioner 1 Ton in Urdu
Air Conditioner 1 Ton in Urdu

ایک ٹن، دو ٹن۔۔۔ کیا آپ کو معلوم ہے

ایئرکنڈیشنر کی صلاحیت ٹنوں کے حساب سے کیوں جانچی جاتی ہے؟
اس کا وزن سے کوئی تعلق نہیں 
بلکہ۔۔۔ جواب آپ کے تمام اندازے غلط ثابت کردے گا

ایک مشہور لطیفہ کچھ یوں ہے کہ ائیرکنڈیشنر ز کی تنصیب کرنے والی ایک کمپنی کے نمائندے نے ایک معمر خاتون کو بتایا کہ ان کے کمرے میں 4 ٹن کا ائر کنڈیشنر لگایا جائے گا، تو معمر خاتون کا منہ حیرت سے کھلا کا کھلا رہ گیا اور وہ کہنے لگیں ” آپ اتنی بھاری چیز میرے کمرے میں کیسے لے کر آئیں گے؟“

اس ریسٹورنٹ پر آپ کو زندگی بھر مفت برگر کھانے کو ملیں گے اگر آپ یہ انتہائی چھوٹی سی شرط پوری کردیں
ویسے معمر خاتون کی حیرت اتنی بے جا بھی نہیں تھی کیونکہ اکثر لوگ ائر کنڈیشنر کے ٹنوں کو اس کا وزن سمجھ بیٹھتے ہیں، جبکہ حقیقت یہ ہے کہ اس کا وزن کے ساتھ کوئی تعلق نہیں ہے۔ تو پھر ائیرکنڈیشنر کی کولنگ کی پیمائش ٹنوں میں کیوں کی جاتی ہے، جبکہ یہ تو وزن کی اکائی ہے؟

ویب سائٹ انرجی وینگارڈ کی رپورٹ کے مطابق ائیرکنڈیشنر کی کولنگ کی پیمائش کیلئے ٹن کی اکائی استعمال کرنے کے پیچھے دلچسپ تاریخ ہے۔ قدیم دور میں جب ائیرکنڈیشنر جیسی ٹیکنالوجی کا کوئی تصور نہیں پایا جاتا تھا تو گھروں کو ٹھنڈا کرنے کیلئے برف کا استعمال کیا جاتا تھا۔ دور دراز پہاڑوں سے لائی جانیوالی اس برف کو امراءکے گھروں کو ٹھنڈا کرنے کیلئے استعمال کیا جاتا تھا۔ کیونکہ یہ برف ٹنوں کے حساب سے لائی جاتی تھی، لہٰذا ٹھنڈک کی پیمائش بھی ٹنوں میں کی جانے لگی۔
ائیرکنڈیشننگ کے ماہر ایلی سن ڈیلز بتاتے ہیں کہ ایک ٹن کے ائیرکنڈیشنر سے مراد ایک ایسا ائیرکنڈیشنر ہے جو فی گھنٹہ 12000 برٹش تھرمل یونٹ (BTU ) حرارت آپ کے کمرے سے نکال سکتا ہے۔ ایک بی ٹی یو سے مراد اتنی حرارت ہے جو ماچس کی ایک تیلی کو مکمل طور پر جلائے جانے سے حاصل ہو سکتی ہے۔

اگر آپ کے پاس ایک ٹن برف ہو تو اسے مکمل طور پر پگھلنے کیلئے 286000بی ٹی یو حرارت کی ضرورت ہو گی ۔اگر ایک ٹن برف 24 گھنٹے میں مکمل طور پر پگھلانا ہو تو اسے 286000 بی ٹی یو حرارت 24 گھنٹے کے درمیان فراہم کر نا ہو گی، جو کہ فی گھنٹہ تقریباً 12 ہزار بی ٹی یو بنتی ہے۔ اس حساب سے آپ یہ کہہ سکتے ہیں کہ آپ کا ایک ٹن کا اے سی ایک گھنٹے میں تقریباً 12 ہزار بی ٹی یو حرارت کو کمرے سے نکال باہر کرتا ہے، یعنی اتنی حرارت ہے جو کہ ایک گھنٹے میں ایک ٹن برف کو پگھلانے کیلئے کافی ہو گی

Qad Lamba Karne Ka Totka in Urdu

قد لمبا کرنے میں مددگار آسان طریقے

Qad Lamba Karne Ka Totka in Urdu
Qad Lamba Karne Ka Totka in Urdu

قد لمبا کرنے کی خواہش کس کو نہیں ہوتی مگر کیا اس کا کوئی آسان طریقہ بھی ہے؟

ویسے اس کی سو فیصد ضمانت تو نہیں دی جاسکتی مگر کچھ چیزوں پر عمل کرکے قد کو ایک ہفتے میں ڈیڑھ سینٹی میٹر تک بڑھایا جاسکتا ہے۔
اگر آپ بھی اس کے خواہشمند ہیں تو درج ذیل طریقوں پر عمل کرکے اس کی کوشش کرسکتے ہیں۔

یہ کیسے ممکن ہے؟
جی ہاں واقعی نیند کے دوران بھی آپ اپنے قد کو بڑھا سکتے ہیں، کمر کے بل دس منٹ لینا ہی قد میں پانچ ملی میٹر کا اضافہ کردیتا ہے، اس کی وجہ یہ ہے کہ دن بھر میں ریڑھ کی ہڈی سکڑتی ہے اور لیٹنے کے بعد وہ اپنی اصل شکل میں لوٹ آتی ہے۔ اس لمبائی کو برقرار رکھنے کے لیے چند مخصوص ورزشیں ہیں تاہم ایک بالغ شخص (25 سال سے زائد عمر) کے افراد میں اس کا امکان بہت کم ہوتا ہے اور کوئی چونکا دینے والے نتائج سامنے نہیں آئیں گے۔

سائیکل چلانا
قد لمبا کرنا چاہتے ہیں تو کسی سائیکل پر سوار ہونے کے بعد سیٹ کو اس طرح ایڈجسٹ کریں کہ آپ کی ٹانگوں کو پیڈل تک پہنچنے کے لیے زیادہ کھینچنا پڑے، تاہم گدی کو بہت زیادہ اونچا بھی نہ کریں ورنہ جوڑوں کو نقصان پہنچ سکتا ہے۔

بار پر لٹکنا
یہ ایک آسان ورزش ہے، بس کسی بار پر لٹک جائیں اور جتنی دیر ہوسکیں وہاں لٹکیں رہیں، بتدریج وقت کو بڑھاتے چلے جائیں، یہ ورزش ریڑھ کی ہڈی اور پیٹ کے مسلز کو مضبوط کرتی ہے۔

کندھوں کے بل کھڑے ہونا
کمر کے بل زمین پر لٹین اور پھر سر اور کندھوں کو زمین پر ٹکاتے ہوئے باقی جسم کو ہوا میں اٹھا لیں، اس ورزش کے لیے ٹانگوں کو جسم کی سیدھ میں رکھنا ضروری ہے ورنہ انجری کا خطرہ ہوسکتا ہے۔

کوبرا آسن
پیٹ کے بل زمین پر لیٹیں اور ہاتھ زمین پر ٹکا کر سر اور سینے کو اوپر اٹھالیں کسی سانپ کی طرح، یہ ورزش کمر، کولہوں اور دیگر حصوں کے لیے بھی فائدہ مند ہے۔

لچک کی ورزش
سیدھے کھڑے ہوں اور پھر دونوں ہاتھوں سے زمین کو چھونے کی کوشش کریں، اس پوز میں آپکا سر اور جسم گھٹنوں کے قریب ہو، ابتداءمیں جتنا ہوسکیں جھکیں اور بتدریج اس میں زیادہ آگے جھکنے کی کوشش کریں۔

اچھلنا
ڈوری کی مدد سے اچھلنا یا کسی مقام پر ویسے ہی اچھلنا اس حوالے سے مددگار ثابت ہوتا ہے، اس سے ہڈیاں اور مسلز مضبوط ہوتے ہیں جبکہ وقت گزرنے کے ساتھ قد میں کسی حد تک اضافہ ہوتا ہے۔

تیرنا
سوئمنگ قد بڑھانے والی ورزشوں میں سب سے اوپر سمجھی جاسکتی ہے، پانی کے اندر ریڑھ کی ہڈی کے مہروں پر بوجھ بہت کم ہوتا ہے جبکہ جوڑ زیادہ کھل جاتے ہیں، جس سے قد بڑھانا آسان ہوجاتا ہے۔

خوراک اور نیند
اگر تو آپ قد بڑھانا چاہتے ہیں تو غذا میں کیلشیئم، آئرن، وٹامن ڈی سمیت دیگر عناصر کی موجودگی ضروری ہے جو کہ جسمانی افعال کے لیے ضروری ہیں، جبکہ سخت سطح پر سونا عادت بنانی ہوگی۔

نوٹ: یہ مضمون عام معلومات کے لیے ہے۔ قارئین اس حوالے سے اپنے معالج سے بھی ضرور مشورہ لیں۔

سیاسی بحران کی وجہ نہ تو ایران ہے اور نہ ہی الجزیرہ

الجزیرہ
الجزیرہ

قطر کے وزیر خارجہ شیخ محمد بن عبدالرحمان الثانی کا کہنا ہے کہ حالیہ سفارتی بحران کی اصل وجوہات کے بارے میں علم نہیں ہے لیکن اتنا معلوم ہے کہ بحران کی وجہ ‘نہ تو ایران ہے اور نہ ہی الجزیرہ’۔
پیرس میں پریس کانفرنس سے خطاب کے دوران انھوں نے کہا کہ قطر مذاکرات کے لیے تیار ہے اور خلیج کی سکیورٹی کے حوالے سے جو بات چیت کرنی ہے اس کے لیے تیار ہے۔
’قطر کے شہریوں کو مسجد الحرام میں داخل نہیں ہونے دیا گیا‘
’قطر کو جب تک ضرورت ہے خوراک بھیجیں گے‘
ہم نے کسی سے بھی ثالثی کرنے کو نہیں کہا: سعودی عرب
’قطر اپنی خارجہ پالیسی تبدیل نہیں کرے گا‘
تاہم انھوں نے کہا ‘قطر غیر ملکی ڈکٹیشن قبول نہیں کرے گا۔’
قطر کے وزیر خارجہ نے پریس کانفرنس میں مزید کہا ‘خارجہ امور سے تعلق رکھنے والی باتیں کے بارے میں کسی کو بات کرنے کا حق نہیں ہے۔’انھوں نے کہا کہ قطر پر لگائے جانے والے الزامات پر بات چیت واضح بنیادی اصولوں پر ہونی چاہیے۔

الجزیرہ میڈیا نیٹ ورک
الجزیرہ میڈیا نیٹ ورک

وزیر خارجہ نے کہا کہ الجزیرہ میڈیا نیٹ ورک قطر کا اندرونی معاملہ ہے اور قطر کے ساتھ سفارتی تعلقات ختم کرنے اور اس پر پابندیاں لگانے والے ممالک کے ساتھ اس میڈیا نیٹ ورک کی قسمت کے بارے میں کوئی بات نہیں کی جائے گی۔
‘قطر کے اندرونی معاملات کے حوالے سے فیصلے قطر کی خود مختاری کے فیصلے ہیں اور کسی کو ان میں دخل اندازی کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔’
دوسری جانب متحدہ عرب امارات کی سول ایوی ایشن اتھارٹی نے ایک بیان میں کہا ہے کہ قطر پر فضائی پابندیاں صرف ان ایئر لائنز کمپنیوں پر ہیں جو قطر کی ہیں یا وہاں رجسٹر ہوئی ہیں۔
متحدہ عرب امارات کے علاوہ سعودی عرب اور بحرین نے بھی فضائی پابندیوں کے حوالے سے بیان میں یہی کہا ہے کہ فضائی پابندیاں صرف ان ایئر لائنز کمپنیوں پر ہیں جو قطر کی ہیں یا وہاں رجسٹر ہوئی ہیں۔
تینوں ملکوں کی جانب سے جاری کیے گئے بیانات میں کہا گیا ہے کہ ‘فضائی پابندی قطر کی ایوی ایشن کمپنیوں اور ان جہازوں پر ہے جو قطر میں رجسٹر ہیں۔’
دریں اثنا مراکش نے خوراک سے بھرا ایک جہاز قطر کے لیے روانہ کیا ہے

 خوراک بھیجنے کا تعلق قطر اور سعودی عرب کے درمیان سیاسی بحران

مراکش کی وزارت خارجہ نے ایک بیان میں کہا ہے کہ خوراک بھیجنے کا تعلق قطر اور سعودی عرب کے درمیان سیاسی بحران سے نہیں بلکہ یہ محض قطری عوام کے لیے ہے۔

واضح رہے کہ سعودی عرب، بحرین، متحدہ عرب امارات، یمن اور مصر نے قطر پر انتہا پسندی کو فروغ دینے کے الزام لگانے کے بعد اس سے اپنے سفارتی تعلقات منقطع کر لیے ہیں۔

ان ممالک نے قطر پر سفری پابندیاں بھی لگائی ہیں۔ قطر نے تمام طرح کے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے ان پابندیوں کو اپنی خودمختاری پر حملہ قرار دیا ہے۔